آسٹریلیا سائبر حملوں کی زد میں ہے- سکاٹ موریسن

آسٹریلوی وزیراعظم سکاٹ موریسن کے مطابق ریاستی سطح پرجاری منظم سائبرحملوں میں حکومت اور اداروں کو نشانہ بنایا جارہا ہے- سائبر حملے وسیع پیمانے پر ہیں جس میں تمام سرکاری اداروں کو نشانے پر لیا گیا جبکہ حکومتی سروسز اور بزنس کو بھی نشانہ بنایا گیا ہے- آسٹریلوی وزیراعظم نے سائبر حملوں پر فوری طور پرکسی حکومت کی طرف اشارہ نہیں کیا ہے۔

سکاٹ موریسن کا کہنا تھا کہ حملوں میں بڑے پیمانے پرذاتی ڈیٹا کی خلاف ورزی نہیں کی گئی ہے تاہم سائبر حملے کئی ماہ پہلے ہوئے جو اب مزید بڑھ رہےہیں، آسٹریلوی وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ان کی طرف سے عوام کو آگاہ کرنے کا مقصد آگہی فراہم کرنا اوراپنے کاروبار کے دفاع کو بہتر کرنا ہے-

انہوں نے مزید کہا کہ اس طرح کی منفی سرگرمیاں عالمی سطح پر دیکھی جارہی ہیں لہٰذا یہ آسٹریلیا کے لیےکوئی خاص اچنبے کی بات نہیں ہے۔

سکاٹ موریسن کا کہنا تھا کہ حکام نے نشاندہی کی ہے یہ ایک ریاستی ہیک کی طرح ہے کیونکہ حملوں کی نوعیت کو دیکھتے ہوئے جدید ٹیکنالوجی کا استعمال کیا گیا ہے، دوسری جانب سائبرحملوں پرسائبر انٹیلی جنس ماہرین نے چین کےملوث ہونے کا خدشہ ظاہر کیا ہے- ماہرین کا کہنا ہے کہ چین ایسی ریاستوں میں سےایک ہےجو روس،ایران اورشمالی کوریا کے ساتھ مل کراس طرح کےحملوں کی صلاحیت رکھتا ہے- اور شبہ ہے کہ ایسا ہوسکتا ہے-

اپنا تبصرہ بھیجیں