دارلحکومت الریاض کی آبادی اور معیشیت 10 سالوں میں دوگنا ہونے کی امید

مملکت سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض سرکاری حکام کے سرمایہ کاری پروگرامز اور میگا پروجیکٹس کی تکمیل کے بعد آئندہ دس سالوں تک آبادی اور معیشت میں دوگنا اضافے کی امید ظاہر کی جا رہی ہے- 

تفصیلات کے مطابق  رائل کمیشن برائے ریاض کے سی ای او پروفیسر فہد بن عبد المحسن الرشید نے کہا ہے کہ کہ سعودی عرب کے ویژن 2030 کے تحت جاری کردہ منصوبہ جات اور بڑے سرمایہ کاری پروجیکٹس اور میگا سکیموں کے ذریعے ہم آنے والے دس سالوں میں میں معیشت کو دوگنا کرنے کی صلاحیت حاصل کر لیں گے- 

رائل کمیشن برائے ریاض کے سربراہ نے مزید بتایا کہ گرین ریاض پروجیکٹ کے ذریعے آبادی کے ہر باشندے کے لئے ایک درخت کے برابر 70 لاکھ سے زیادہ درختوں کو اگانے کے لئےبڑے پیمانے پر مہم جاری ہے اس کے علاوہ گرین منصوبے کے ذریعے  صاف پانی کے حصول کو ممکن بناتے ہوئے دارالحکومت ریاض دنیا کے دنیا کا پہلا ایسا شہر بنے  گا جس نے اتنی قلیل مدت میں میں یہ ہدف حاصل کیا ہوگا- 

انہوں نے مزید بتایا کہ شہر کے گلی کوچوں میں ریاض آرٹ پروجیکٹ کے ذریعے ایک ہزار سے زائد فن کے نمونے آویزاں کیے جائیں گے اور جدید فن جمالیات کو ریاست کے متنوع ثقافتی پہلوؤں کے ساتھ پیش کیا جائے گا- 

واضح رہے کہ اس سے پہلے پروفیسر فہد کی زیرصدارت جی 20 کے سرکاری نمائندوں کا دوسرا اجلاس بھی منعقد ہوا تھا جس میں سماجی ترقی اور انسانی فلاح و بہبود کی خاطر سعودی حکام کے اقدامات کو دنیا کے سامنے پیش کیا گیا تھا- دنیا کے طاقتور ترین ممالک کے گروپ جی ٹونٹی کی سربراہی سعودی عرب کر رہا  ہے جبکہ گزشتہ برس یہ میزبانی جاپان کے پاس تھی- 

اپنا تبصرہ بھیجیں