پشاور ہائیکورٹ نے ’غیر اخلاقی مواد کی وجہ سے ٹک ٹوک پر پابندی عائد کردی۔

ٹِک ٹوک ، ایک موبائل ایپلی کیشن جو عام طور پر نوجوانوں کی ویڈیوز بنانے اور شیئر کرنے کے لئے استعمال کیا جاتا ہے ، پر پشاور میں ‘غیر اخلاقی مواد’ پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔
پشاور ہائی کورٹ کے چیف جسٹس قیصر راشد خان نے کہا کہ قابل اعتراض مواد ہٹائے جانے تک پابندی نہیں ہٹائی جائے گی۔
پی ٹی اے کے ڈی جی نے عدالت کو بتایا کہ انہوں نے قابل اعتراض مواد ہٹانے کے لئے حکام سے رابطہ کیا لیکن انہیں کوئی جواب نہیں ملا۔ جسٹس خان نے ریمارکس دیئے کہ جب تک حکام جواب نہیں دیتے اس وقت تک ایپ کو روکنا چاہئے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں